دیامر بھاشہ ڈیم معاوضہ جات کی ادائیگی مسئلہ مختلف قبائیلوں میں میدان جنگ بن گیا

Diamir BAsh dam fightinh.jpgچلاس(عمر فاروق) دیامر بھاشہ ڈیم کی تعمیر اور متاثرین کو معاوضاجات کی ادائیگی میں عدم توازن اور غیر منصفانہ تقسیم پرضلع بھر میں مختلف قبائل نے تحفظات کا اظہار کر دیا ہے،اور گزشتہ کئی روز سے چلاس کے اندر مختلف قبائل آپس میں دست و گریباں ہیں،اورچلاس کے حالات قبائیلی دشمنیوں کی طرف جاتے ہوئے نظر آرہے ہیں۔مختلف قبائل کی جانب سے حدود اور حق ملکیت کے حصول کیلئے اُٹھنے والی تحرکیں روز بروز طول پکڑتی جارہی ہیں اور حالات انتہائی مخدوش دیکھائی دے رہی ہیں۔گلگت بلتستان کی صوبائی حکومت نے حالات کی نزاکت کو بھانپتے ہوئے ضلع بھر میں سرکاری رٹ قائم کرنے کیلئے ضلعی انتظامیہ کے سربراہان کو سیکورٹی سخت کرنے کے احکامات جاری کیا ہے،اس وقت چلاس شہر میں جی بی سکائٹس،پاک آرمی،جی بی پولیس اور لیوز کے دستے تعینات ہیں،اور شہر میں کسی بھی ناخوشگوار واقعات سے نمٹنے کیلئے الرٹ کھڑے ہیں۔ جگہ جگہ ناک بندیاں کرکے تلاشی کا سلسلہ جاری ہے،ہر جگہ خوف و ہراس ہے۔ دیامر بھاشہ ڈیم کی تعمیر کو بغیر کسی رکاوٹ اور مخالفت کے پایہ تکمیل کو پہنچانے کیلئے وفاقی اور صوبائی حکومت دیامر کے مختلف متاثرہ قبائل اورمتاثرین دیامر ڈیم کے خدشات اور تحفظات کو حل کرنے کیلئے عملی اقدامات اُٹھائیں اور منصفانہ طور پر دست و گریباں ہونے والے تمام قبائل کو برابری کے بنیاد پر ان کو حقوق دیئے جائیں،تاکہ پاکستان کی بقا اور خوشحالی کا ضامن دیامر ڈیم کا یہ عظیم منصوبہ بلا تاخیر کامیابی کے ساتھ مکمل ہوسکیں،اور مختلف قبائل کے مابین پائی جانے والی دوریاں اور نفرتیں مزید جنم نہ لیں سکیں۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s