مودی،نواز شریف اور حفیظ الرحمن کا ایک ہی موقف ہے جو گلگت بلتستان کو صوبہ بنانے کے مخالف ۔سی پیک منصوبے کے تحت جو کنٹینر ز گزرنے کے نام پر سمگلنگ کیا جارہا ہے اور اس میں گورنر میر غضنفر علی خان باقائدہ پاٹنر ہیں. امجد حسین ایڈووکیٹ

923448-PPP-1437424800-681-640x480گلگت (ارسلان علی)پاکستان پیپلزپارٹی گلگت بلتستان کے صدر امجد حسین ایڈووکیٹ نے کہا ہے کہ پاک آرمی 2008میں گلگت بلتستان کو صوبہ بنانا چاہتی تھی اور اب بھی چاہتی ہے ،لیکن مودی،نواز شریف اور حفیظ الرحمن کا ایک ہی موقف ہے جو گلگت بلتستان کو صوبہ بنانے کے مخالف ہیں۔ مسلم لیگ ن کے دور میں گلگت بلتستان صوبہ تودور کی بات ہے یہ لوگوعوام کو انگوٹھا دیکھاکر پانچ سال پورا کرینگے ۔سی پیک منصوبے کے تحت جو کنٹینر ز گزرنے کے نام پر سمگلنگ کیا جارہا ہے اور اس میں گورنر میر غضنفر علی خان باقائدہ پاٹنر ہیں۔چیف سیکریٹری گلگت بلتستان کا مہاراجہ بنا ہوا ہے جس نے سی پیک کے نام پر گلگت بلتستان کے عوام کی ملکیتی10ہزار کنال زمین سرکاری اداروں کو بغیر کسی معاوضے کے الراٹ کررہاہے ،گلگت بلتستان ہماری ماں ہے اور چیف سیکریٹریہ ہماری ماں کا سودہ کررہاہے ۔بدھ کے روز پیپلز پارٹی جی بی امجد حسین اےڈووکیٹ، جمیل احمد ،میرباز کیتھران ودیگر کے ہمراہ میٹ دی پریس کے موقع پر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ گلگت بلتستان اورسنکے ان کوٹےکس فری زون قرار دیاجائے اورگلگت بلتستان سے ٹیرف ،بیریرز اور دیگر ٹیکس محصولات اٹھائے جائے،ان سب کے لئے چائنہ مان چکا ہے لیکن پاکستان کی حکومت ایسا ہونے نہیں دے رہی ہے ۔انہوں نے کہاکہ جن اداروں کا دباﺅ پاکستان پر ہے ہم ےکم نومبر کو جلسہ کے زریعے ان تک اپنی آواز پہنچانا چاہتے ہےں۔ سی پےک 46ارب ڈالر کا منصوبہ ہے اربوں روپے کے پراجیکٹ کےلئے عوام سے مفت زمینیں اٹھائی جارہی ہیں جو کہ انٹر نےشنل قوانین کے تحت یہ بڑا جرم ہے ، ناتوڑ رول کے تحت تھک داس اور حراموش سے زمینیں اٹھا ئی جارہی ہیں ،ناتوڑ رول ریونیو ایکٹ سے متصادم ہے یہ رول کس قانون کے تحت قائم کیاگیا عوام کو بتایا جائے۔ انہوں نے کہاکہ غریب عوام کو گلہ کھونٹا جارہاہے اور اس ظلم کی مثال کہیں اور نہیں ملتی ہے ۔اسمبلی سیکریٹری میں 9ماہ قبل حق ملکیت بل جمع کروایا گیا لیکن سیکریٹریٹ سے اسمبلی ہال تک نو ماہ میں نہیں پہنچ ہے اور یہ بل اب ہم ےکم نومبر کو عوام کیعدالت میں پیش کریں گے ،ناتود رول سندہ بلوچستان،پنجاب سمیت ملک کے تمام صوبوں اور بھارت میں بھی نہیں ہے ۔ انہوں نے ایک سول کے جواب میں کہاکہ ہماری حکومت کے دور میں سوال آیا لیکن خیال نہیں آیا ہم نے لوگوں کےلئے سٹےنڈ ضرورلیا۔ انہوں نے کہاکہ موجودہ چیف سےکریٹری واائی سرائی کا کردار ادا کر رہاہے انہیں ایک پیغام دینا چاہتے ہیں زمینوں کی الاٹ منٹ کے نوٹیفکیشن پر عملد آمد کیا گیاتو یکم نومبر کے بعد اگلا پڑا ؤ چیف سیکریڑی آفس کے سامنے ہوگا۔ انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہاکہ ڈپٹی سپیکر قانون ساز اسمبلی گلگت بلتستان کرایہ کے مکان میں رہنے کو حق   ملکیت اور حق حاکمیت سمجھتے ہیں ۔ تھک میں 6000کنال زمین سی پیک منصوبے کےلئے درکار ہے 10ہزار کنال اٹھائی گئی ہے لیکن معاوضہ نہیں دیا گیا جس ادارہ کو بھی چاہئے معاوضہ دےکراراضی کوالاٹ کےا جائے سی پیک کنٹرینر سمگلنگ میں قربان نامی شخص نے چائنہ میں بیٹھ کر سی پیک کے نام سے کنٹینرز بک کررہا ہے اوراس شخص کی کئی گاڑیاںپکڑی گئی ہیں جو سی پیک قافلہ میں شامل کرنے کی کوشش کی جارہی تھی ۔ انہوں نے کہاکہ یکم نومبر کو حق ملکیت و حق حاکمیت تحریک کا آغاز کر رہے ہیں اس جدو جہد میں شائد 10سال لگ جائیں لیکن جدوجہد کو جاری رکھا جائے گا ۔حق ملکےت بھٹوکا1972 میں دیا ہوا فلسفہ ہے۔ پیپلز پارٹی کی صوبائی قیادت پراس وقت کسی بچے کا بھی اعتراض نہیں ہے۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s